آخر لوگ کھیرے کاٹ کر ٹکڑا اس سے رگڑتے کیوں ہیں؟

لاہور (ویب ڈیسک ) کبھی آپ نے کسی ایسے سستے پھل (جسے ہم سبزی سمجھتے ہیں) کے بارے میں سنا ہے جو باآسانی دستیاب ہو اور جس کا استعمال آپ کے جسم کے اندر اور باہر جادوئی اثرات مرتب کرتا ہو؟اور وہ ہے کھیرا جو جسم کو پانی کی وافر مقدار ہی

فراہم نہیں کرتا بلکہ متعدد اقسام کے وٹامنز اور منرلز سے بھرپور بھی ہوتا ہے۔ یہ اضافی جسمانی وزن میں کمی کے مقصد میں مدد بھی دیتا ہے جبکہ اس میں موجود وٹامن بی، پوٹاشیم اور میگنیشم دیگر فوائد فراہم کرتے ہیں۔ مگر آپ نے اکثر دیکھا ہوگا کہ اکثر افراد کھیرے کو دونوں جانب اوپری حصوں کو کاٹ کر اسے کسی ایک جانب سے اندر گودے سے رگڑتے ہیں، آخر اس کی وجہ کیا ہے؟ تو اس کی وجہ آپ کے حس ذائقہ سے جڑی ہے۔ جیسا اوپر درج کیا جاچکا ہے کہ کھیرے صحت کے لیے بہت فائدہ مند ہوتے ہیں مگر اکثر ان کا ذائقہ کافی تلخ یا کڑوا ہوتا ہے۔ اس کڑواہٹ کو ختم کرنے کے لیے کھیرے کے دونوں سرے کاٹ کر ایک ٹکڑے کو گودے سے رگڑا جاتا ہے۔ ایسا کرنے پر ایک سفید اور جھاگ دار مواد سے خارج ہوتا ہے جسے cucurbitacin کہا جاتا ہے اور وہ ہی اس پھل میں کڑواہٹ کا باعث ہوتا ہے۔ کڑواہٹ کو مکمل دور کرنے کے لیے ایک ٹکڑے کو گودے سے اس وقت تک رگڑنا ہوتا ہے جب تک جھاگ نکلنا بند نہیں ہوجاتا۔ یہ مادہ کھیروں کے چھلکے میں ہوتا ہے جو اس عمل میں باہر نکل جاتا ہے، ویسے یہ صحت کے لیے نقصان دہ نہیں ہوتا بس منہ کا ذائقہ خراب کردیتا ہے۔

کیٹاگری میں : صحت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں