بریکنگ نیوز: مودی کی معاشی پالیسیاں تباہ۔!! ملٹی نیشنل کمپنیاں بھارت سے سرمایہ نکالنے لگیں، سُپر پاور ملک نے کھربوں کا سرمایہ نکال لیا، بھارت کنگلا ہونا شروع

نئی دہلی (ہاٹ لائن نیوز) بھارت کنگلا ہوگیا۔ مودی حکومت کے معیشت دشمن فیصلوں کے اثرات سامنے آنا شروع ہوگئے، بین الاقوامی کمپنیوں نے بھارت سے سرمایہ نکالنا شروع کر دیا ہے۔ بین الاقوامی خبر رساں ایجنسی کے مطابق بھارت میں جاپانی کمپنی ٹویوٹا، امریکہ کی جنرل موٹرز کے بعد مشہور موٹر سائیکل کمپنی ہارلے ڈیوڈ سن نے بھی بھارت میں اپنے کاروبار کو سمیٹنا شروع کردیا ہے۔ چند ہفتے قبل ٹوٹیوٹا موٹرز کی طرف سے ایک بیان سامنے آیا تھا کہ انڈیا میں ٹیکسوں کی پالیسیوں کی وجہ سے کمپنی اپنے کاروبار کو برقرار رکھنے سے قاصر ہیں، ٹویوٹا کے بعد ہارلے ڈیوڈسن کی جانب سے بھی ایسا ہی بیان سامنے آیا ہے۔ برطانوی خبر رساں ادارے کے مطابق اگرچہ بھارتی منڈی بہت ساری ترقی پذیر معیشتوں کی نسبت سستی ہے، لیکن انڈیا کی جانب سے ٹیکسوں میں اضافے کے باعث یہ مارکیٹ غیرملکی کمپنیوں کے لیے ایک مشکل مارکیٹ بن گئی ہے۔ امریکی کمپنی جنرل موٹرز نے بھی 2017ء میں بھارت سے سرمایہ کاری نکال لی تھی جبکہ فورڈ نے گزشتہ برس اپنا زیادہ تر سرمایہ انڈیا کی بڑی کار ساز کمپنی مہیندرا اینڈ مہیندرا کے ساتھ مشترکہ سرمایہ کاری میں لگا دیا تھا۔ ہارلے ڈیوڈسن نے 2011 میں بھارت میں اپنا پروڈکشن یونٹ قائم کیا تھا، اور ہارلے ڈیوڈسن کیلئے بھارتی منڈی میں جاپانی ہنڈا اور مقامی موٹرسائیکل کمپنی ہیرو نے کافی مشکلات کھڑی کیں، تاہم اس یونٹ کے بند ہونے سے لاکھوں افراد کے بے روزگار ہونے اور 75 ملین ڈالر کی سرمایہ کاری نکلنے کا خطرہ ہے۔ واضح رہے کہ بھارت میں کرونا کی صورتحال تشویشناک ہوگئی ہے، روزانہ مرنیوالوں کی تعداد ہزاروں میں ہوگئی ہے۔ ایک طرف تو مودی کی ہندوتوا پالیسیوں کی وجہ سے بھارت میں انتشار پیدا ہوا تو دوسری طرف رہی سہی کسر مودی کی کرونا پر غلط لاک ڈاؤن پالیسیوں نے نکال دی جس پر بھارتی سرمایہ کاروں اور عوام نے سنگین تحفظات کا اظہار کیا تھا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں