بریکنگ نیوز: مسلم لیگ (ن) دو واضح حصوں میں تقسیم۔۔۔ (ن) لیگی رہنماؤں اور پٹواریوں کی آنکھیں کھول دینے والی خبر آگئی

اسلام آباد (ہاٹ لائن نیوز) ن لیگی قیادت میں تقسیم کھل کر سامنے آگئی۔ ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق ن لیگ میں اس وقت کھلی تفریق اور نظریاتی دوری دیکھی جا سکتی ہے . عسکری قیادت سے ملاقات کے سلسلے میں ن لیگی قیادت تقسیم ہے اور اس سلسلے میں دو رائے رکھتے ہیں.

مریم نواز نے اپنی ٹؤیٹ میں کہا ہے کہ سیاسی معاملات کے حل کے لیے پارلیمنٹ‌ میں‌ آنا چاہیے جبکہ ن لیگ کے سینئر رہنما احسن اقبال نے کہا سیاسی قیادت کا عسکری قیادت سے ملنا اور ملکی مسائل پر بات چیت کرنا معمول کی بات ہے اور یہ پریکٹس پوری دنیا میں‌ہوتی ہے . اس میں‌کوئی حرج کی بات نہیں‌ ہے . مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے کہا ہے کہ نواز شریف کے کسی نمائندے نے آرمی چیف قمر جاوید باجوہ سے ملاقات نہیں کی، نواز شریف کی صحت آپریشن کی متقاضی ہے، جب تک کورونا ہے رکھتے ہیں ۔اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کے دوران مریم نواز نے آرمی چیف سے ن لیگی نمائندے کی ملاقات کی تردید کر دی، ان کا کہنا تھا کہ ڈنر ہوا یا نہیں، اسکا کوئی علم نہیں، سیاسی معاملات سیاسی قیادت کو حل کرنے دیں، سیاسی قیادت کو بھی نہیں جانا چاہیے۔ لیگی رہنما نے کہا کہ سیاسی معاملات کو پارلیمنٹ میں ہی ڈسکس کرنا چاہیے، ظلم و جبر کے ہتھکنڈے ایک حد تک چلتے ہیں۔ اے پی سی کے فیصلوں کی پاسداری کی جائے گی، اشتہاری کی درخواست پر منتخب وزیر اعظم کو نااہل کیا گیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں