بڑے بڑے منٹوں میں کنگال: ڈالر نے پاکستانی سرمایہ کاروں کی چیخیں نکلوا دیں ، قیمت میں ریکارڈ اضافہ ۔۔۔۔ اسٹاک مارکیٹ بھی کریش کر گئی

کراچی (ویب ڈیسک) انٹربینک مارکیٹ میں ڈالر کی پرواز جاری ہے اور اب روپے کے مقابلے میں نئی بلند ترین سطح پر جا پہنچا ہے۔ نجی ٹی وی نیوز چینل کے مطابق آج ایک بارپھرانٹربینک میں بھی ڈالر کو پر لگ گئے ہیں اور اب روپے کے مقابلے میں نئی

بلند ترین سطح پرجا پہنچا ہے۔ جمعے کے روز انٹربینک مارکیٹ میں ڈالر کی قدر میں 3 روپے کا اضافہ ہوا جس کے نتیجے میں ڈالر کی قدر بڑھ کر 150 روپے کی نئی بلندترین سطح پرپہنچ گئی۔ گزشتہ روزبھی ڈالرکی قیمت خرید میں 5 روپے 61 پیسے کا اضافہ ہوا تھا جس کے بعد انٹر بینک مارکیٹ میں ڈالرکی قدر147 روپے کی بلند ترین سطح پرجاپہنچی تھی۔ دوسری جانب اسٹاک ایکسچنج میں کاروبارکے آغاز میں مندی کا رجحان دیکھا جارہا ہے۔ اسٹاک ایکس چینج میں مندی کی شدت 898 پوائنٹس کی کمی تک پہنچ گئی۔ کے ایس ای 100 انڈیکس مزید گھٹ کر33093 پوائنٹس کی سطح پر آگیا جب کہ شئیرز کی قیمت کم ہونے سے سرمایہ کاروں کے 105 ارب روپے ڈوب چکے ہیں۔ واضح رہے کہ آئی ایم ایف سے کئے گئے معاہدے کے تحت پاکستان کو روپے کی قدرمیں 20 فیصد تک کمی کرنا ہے۔ اسی صورت حال کو دیکھتے ہوئے ڈالر کی خریداری کے رجحان میں اضافہ دیکھا جارہا ہے۔دوسری جانب وپے کی مسلسل بے قدری اور ڈالر کی اونچی اڑان کا سلسلہ جاری ہے اور آج ایک مرتبہ پھر انٹر، اوپن مارکیٹ میں ڈالر مہنگا ہوگیا۔ کاروبار کے لین دین کے دوران اوپن مارکیٹ میں ڈالر 3 روپے مہنگا ہوا جس کے بعد یہ ملکی تاریخ کی نئی بلند ترین سطح 150 روپے تک پہنچ گیا۔ اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی خریداری قیمت 148 روپے ہے، گزشتہ روز اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت خرید 146 اور قیمت فروخت 148 تھی۔ انٹر بینک میں کاروبار کے

دوران ڈالر 2.48 روپے مہنگا ہو کر 149 روپے کا ہوگیا جب کہ انٹر بینک میں ڈالر کی خریداری قیمت 147 روپے ہوگئی۔ گزشتہ روز کاروبار کے اختتام پر انٹر بینک مارکیٹ میں امریکی ڈالر مجموعی طور پر 5.13 روپے اضافے کے بعد 146.52 پر بند ہوا تھا۔دوسری جانب پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں بھی کاروبار کے دوران منفی رجحان دیکھا گیا جہاں 100 انڈیکس 648 پوائنٹس کم ہو کر 33 ہزار 322 کی سطح تک آ گیا۔واضح رہےکہ حکومت اور عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے درمیان معاہدے سے قبل ڈالر کی قدر 141 سے 142 روپے کے درمیان تھی اور آئی ایم ایف سے معاہدے کے بعد ڈالر کی قدر میں مزید اضافے کا امکان ظاہر کیا جارہا ہے۔ امریکی ڈالر ایک ہی دن میں 5 روپے 60 پیسے اور مہنگا ہوگیا، انٹربینک میں قیمت 147 روپے تک پہنچ گئی، ڈالر کی قیمت بڑھنے سے پاکستان کے بیرونی قرضے 666 ارب روپے بڑھ گئے، باہر سے آنے والا پیٹرول مہنگا ہوگا تو سب مہنگا ہوگا۔ معاشی ماہرین نے آنے والے دنوں میں روپے کی قدر مزید گرنے کا خدشہ ظاہر کر دیا، پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں بھی مندی کا رجحان رہا، 100 انڈیکس 320 پوائنٹس کی کمی کے بعد 33 ہزار 971 پوائنٹس پر بند ہوا۔ انٹر بینک میں آج کاروبار کا آغاز ہوا تو ایک امریکی ڈالر 141 روپے 39 پیسے کا تھا جس کی قدر میں دیکھتے ہی دیکھتے اضافہ ہوا اور 5 روپے 61 پیسے مہنگا ہونے کے بعد 147 تک پہنچ گیا لیکن کاروبار کے اختتام پر ڈالر مجموعی طور پر 5.13 روپے اضافے کے بعد 146.52 پر بند ہوا۔ اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت خرید 146 اور قیمت فروخت 148 ہے۔ ڈالر کی نئی اڑان کے بعد پاکستان کے بیرونی قرضوں میں 666 ارب روپے کا اضافہ ہوگیا۔ روپے کی قدر گرنے سے پہلے پاکستان کے 105 ارب ڈالر کے بیرونی قرضوں اور واجبات کا حجم پاکستانی روپوں میں 14 ہزار 891 ارب روپے تھا جو بڑھ کر 15 ہزار 558 ارب روپے ہوگیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں