ایک مریض اور اسکے ساتھ آنے والوں کے دل و دماغ میں کیا چل رہا ہوتا ہے ؟ 50 ہزار سے زائد مریضوں کا علاج کرنے والے ہر دلعزیز ڈاکٹر نے آئے روز ہڑتالوں پر جانیوالے پاکستانی مسیحاؤں کے نام بڑا پیغام جاری کردیا

میانوالی (ویب ڈیسک) ڈاکٹر بننے کے بعد آج تک تقریبا 50 ہزار مریض دیکھے ہوں گے۔۔یہ مریض ہم ڈاکٹرز پر 3 احسان کرتے ہیں۔۔1- یہ اعلان کرتے ہوئےگھر سے نکلتے ہیں کہ جس ڈاکٹر صاحب کے پاس جا رہے ہیں،وہ اس شہر کا سب سے بہترین ڈاکٹر ہے۔۔2- اپنے گھر سے ہی تیاری کر کے آتے ہیں کہ

ضلع میانوالی کی نامور شخصیت ، ہر دلعزیز مقرر اور مشہور ڈینٹل سرجن ڈاکٹر حنیف نیازی اپنی ایک خصوصی تحریر میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ ڈاکٹر صاحب جتنے پیسے کہیں گے، آنکھیں بند کر کے پیش کر یں گے۔۔ 3- ساری زندگی اسی ڈاکٹر صاحب کے گیت گاتے رہتے ہیں، اسی ڈاکٹر کی ایڈورٹائزمنٹ کرتے رہتے ہیں،جو ان سے اخلاق سے پیش آیا تھا۔۔جس سے انھیں شفاء ملی تھی۔۔اس لیے میں اپنے سارے مریضوں کو اپنا محسن سمجھتا ہوں،جن کو اللہ عزوجل نے میرے پاس بھیجا اور جن کے وسیلے سے مجھ تک دنیا و جہاں کی نعمتیں پہنچیں۔۔مریض 2 قسم کے ہوتے ہیں۔۔مریضوں کی ایک کیٹیگری وہ ہوتی ہے جو آپ سے خوش ہوتے ہیں، آپ کو دعائیں دیتے رہتے ہیں۔۔ یہ مریض آپ کی مشہوری کا باعث بنتے ہیں۔۔مریضوں کی دوسری کیٹیگری وہ ہوتی ہے جو غلط فہمی کی بنیاد پر یا قائق کی بنیاد پر آپ سے ناراض ہو جاتے ہیں اور پھر مرتے دم تک آپ پر لعنت بھیجتے رہتے ہیں۔۔ چونکہ میں بھی ایک ڈاکٹر ہوں، ایک انسان ہوں تو میرے بھی کئی مریض خوش ہیں اور کئی مریض ناراض ہیں۔۔ خوش مریضوں کی وجہ سے میں خوشحال رہتا ہوں، مطمئن رہتا ہوں، شکرگزار رہتا ہوں۔۔ناراض مریضوں کی وجہ سے میں اپنے آپ میں رہتا ہوں، انسان رہتا ہوں، فرعون نہیں بنتا۔۔ اس لیے ڈاکٹر ہونے کے ناطے ہم ڈاکٹرز کا یہ فرض بنتا ہے کہ اپنے محسنوں تک اللہ عزوجل کے خزانوں سے شفاء پہنچانے کے لیے ہم ہر روز یہ عہد کیا کریں کہ اپنے ہر مریض کو ایجوکیٹ کریں گے۔۔ اپنے ہر مریض کو خوب عزت دیں گے۔۔ اپنے مریضوں سے کبھی بھی جھوٹ نہیں بولیں گے۔۔ کبھی بھی سٹرلائزیشن پہ سمجھوتہ نہیں کریں گے۔۔ کبھی بھی مٹیریل میں، پروڈکٹ میں، ٹیکنیک میں، دھوکہ نہیں کریں گے۔۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں