تاجروں کو بڑی پیشکش :مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ نے بڑا اعلان کر دیا

اسلام آباد (ویب ڈیسک) خزانے، محاصل اور اقتصادی امور کے بارے میں وزیر خزانہ کے مشیر ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ کا کہنا ہے کہ پاکستان سرمایہ کاری کے لئے سازگار ماحول کی پیشکش کرتا ہے اور امریکی تاجروں کو سرمایہ کاری کے ان مواقع سے استفادہ کرنا چاہئے۔ جمعہ کے روزاسلام آباد میں

امریکی ناظم الامور پاول جونز سے گفتگو کے دوران انہوں نے کہا کہ پاکستان کی امریکہ کے ساتھ تعلقات کی ایک طویل تاریخ ہے اور دونوں ملکوں کو عوام کے درمیان روابط کو مزید فروغ دینے کی ضرورت ہے۔ امریکی ناظم الامور نے دونوں ملکوں کے درمیان اقتصادی اور تجارتی تعلقات کو مزید مستحکم کرنے کی ضرورت پر پھر زور دیا۔ فریقین نے دوطرفہ تعلقات پر تبادلہ خیال کیا اور دونوں ملکوں کے باہمی فائدے کے لئے تعاون کے دائرئہ کار کو مزید توسیع دینے کی ضرورت پر زور دیا۔ وزیراعظم کے مشیر نے امریکی سفیر کو بڑے پیمانے پر اقتصادی استحکام اور معیشت کو درست سمت میں گامزن کرنے کے لئے حکومت کے اقدامات کے بارے میں بتایا۔ انہوں نے امریکی سفیر کو فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے بارے میں عالمی عزم کے حوالے سے حکومت کے اقدامات کے بارے میں بتایا۔ فریقین نے دوطرفہ تعلقات کی تنظیم نو اور نجی شعبے اور سرمایہ کاری پر مبنی تعلقات کو مزید فروغ دینے پر توجہ مرکوز کرنے کی ضرورت پر زور دیا.دوسری جانب خبر کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے قوم کو امید دلاتے ہوئے کہا ہے کہ جب برا وقت آتا ہے تو قوم اس سے نکلتی ہے، ہمارے دو مہینے اور مشکل ہیں، یقین دلاتا ہوں سب چیلنجز سے جلد نکل جائیں گے۔ وزیراعظم عمران خان کا کراچی میں شوکت خانم ہسپتال کی فنڈ ریزنگ تقریب سے خطاب میں کہنا تھا کہ سب سے بڑی نعمت یہ ملک ہے جو ہمیں اللہ تعالیٰ نے دیا، آنے والے وقت میں دنیا ہماری مثال دیا کرے گی،

اس ملک میں باہر سے لوگ نوکریاں ڈھونڈنے آیا کریں گے۔ عمران خان نے کہا کہ جب برا وقت آتا ہے تو قوم اکھٹی ہوتی ہے نہ کہ ڈالر خریدنے لگ جائیں۔ جب ایک گھر پر قرض چڑھ جاتے ہیں تو تھوڑا مشکل وقت گزارنا پڑتا ہے۔ جب برا وقت آتا ہے تو قوم برے وقت سے نکلتی ہے۔ مشکل وقت انسان کو مضبوط اور سکھانے کے لئے آتا ہے۔ انسان صرف کوشش کرتا ہے لیکن کامیابی اللہ تعالیٰ دیتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ شوکت خانم اسپتال میں 75 فی صد غریبوں کا مفت علاج ہوتا ہے، شوکت خانم اسپتال کوفنڈز دینے والوں کا شکریہ ادا کرتا ہوں، آپ کے عطیات غریب عوام کے علاج پر خرچ ہوتے ہیں.انھوں نے کہا کہ ابتدا میں لوگ کہتےتھے کہ شوکت خانم اسپتال نہیں بن سکتا، اس خواب کو سچ کرنے پر آپ کا شکریہ گزار ہوں، اچھا وقت نہیں، بلکہ برا وقت آپ کو اوپر جانا سکھاتا ہے.انھوں نے کہا کہ گزشتہ 10 سال ملک میں جس طرح لوٹ مار ہوئی، تو برا وقت آنا طے تھا، جب تک آمدنی نہیں بڑھتی، مشکل وقت گزارنا پڑتا ہے، دو سے ڈھائی ماہ اور مشکل وقت سے گزرنا پڑے گا، میرا ایمان ہے کہ پاکستان اپنے پیروں پر کھڑا ہوگا، بیرون ملک سے لوگ ملازمتوں ڈھونڈنے آئیں گے.وزیر اعظم کے بہ قول جب قوم اکٹھی ہوجاتی ہے، تو بڑے بڑے مشکل مرحلے مل کر طے کرتے ہیں، سیلاب کے وقت لوگوں نے خود سے اپنی قومی کی مدد کی، انشااللہ آنے والے دور میں دنیا دوبارہ پاکستان کی مثال دے گی، جسے ساٹھ کی دہائی میں دیا کرتی تھی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں