مولانا کو راضی کیے بنا نہیں چل سکتے۔۔۔!!! چوہدری برادران نے عمران خان کو وارننگ دے دی، ملک میں نیا سیاسی بحران پیدا ہونے کا خدشہ

اسلام آباد(نیوز ڈیسک ) مولانا فضل الرحمان سے آزادی مارچ ختم کرنے کیلئے مذاکرات کرنے والی ٹیم کے رکن سپیکر پنجاب اسمبلی پرویز الٰہی نے کہا ہے کہ ہوگاوہی جس پر فضل الرحمان راضی ہوں گے۔ پرویز الہیٰ نے کہا ہے کہ وزیر اعظم عمران خان کے استعفے کے متبادل تجاویز آگئی ہیں، جو

مولانا کہیں گے وہی ہوگا۔ بدھ کو چوہدری پرویز الٰہی چوتھی مرتبہ مولانا فضل الرحمان سے ملاقات کے لیے ان کی رہائش گاہ پہنچے اور حکومتی مذاکراتی کمیٹی کے اجلاس کے دوران وزیراعظم سے ٹیلی فون پر ہونے والی مشاورت اور تجاویز سے آگاہ کیا۔ایک گھنٹے سے زائد دورانیے کی بیٹھک کے بعد پرویز الٰہی نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ایک ایک کرکے نہیں بتا سکتا۔ اکٹھی ہی خوشخبری سنائیں گے۔ہم پرامید ہیں اور چیزیں بہتری کی جانب جا رہی ہیں۔ وزیر اعظم کے استعفے کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ جس بات پر مولانا راضی ہوں گے وہی بات ہوگی۔ وزیراعظم کے استعفے کے متبادل تجاویز ہیں ان پر جلد آؤٹ کم دیں گے۔ملاقات میں آزادی مارچ اور دھرنے کواٹھانے سے متعلق مولانا فضل الرحمان کے مطالبات پر بات چیت کی گئی۔ اس موقع پر چودھری پرویز الٰہی نے مولانا کو مطالبات کی منظوری کیلئے کچھ تجاویز بھی دی ہیں۔ انہوں نے ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ جلد خوشخبری سنائیں گے، سب پرامید ہیں چیزیں بہتری کی طرف جارہی ہیں ،انہوں نے ایک سوال ’وزیراعظم کے استعفے پر مولانا کو راضی کرلیا؟کے جواب میں کہا کہ جلد اچھی خبریں دیں گے۔چودھری پرویز الٰہی نے کہا کہ جس بات پر مولانا راضی ہوں گے، وہی بات ہوگی۔مولانا کو بہت ساری تجاویز دی ہیں ،امید ہے بہترنتیجہ نکلے گا۔ دوسری جانب جمعیت علمائے اسلام ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ چودھری برادران کی پاکستانی سیاست میں ایک حیثیت ہے، کوشش ہے کہ ہم انہیں اس بات پر قائل کر سکیں کہ وہ تین ماہ میں نئے انتخابات کرانے کے لئے حکومت کو آمادہ کریں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں