(ن)لیگ کے لیے شرم سے ڈوب کر مر جانے کا مقام۔۔۔۔ 100 ارب منافع کمانے والے پنجاب کو کتنے سو ارب کا مقروض کر دیا؟ تہلکہ خیز دعویٰ کردیاگیا

لاہور(ویب ڈیسک) شہباز شریف اپنی بے گناہی کے بڑے بڑے دعوے ایسے وقت پرکر رہے ہیں جب پاکستان کے قانونی اداروں کے ہاتھوں گرفتار ان کے فرنٹ مین شہباز شریف اور حمزہ شہباز کے کہنے پر اربوں کھربوں کی کرپشن کا اعتراف کر چکے ہیں، یہ وہی شہباز شریف ہیں جنہوں نے پرویز الٰہی سے 100 ارب منافعے والا

صوبہ پنجاب 1200 ارب کا مقروض کر کے سردار عثمان بزدار کے حوالے کیا، یہ وہی شہباز شریف ہیں جنہوں نے اپنی بنائی 56 کمپنیوں کے ذریعے لوٹ مار کر کے انہیں خسارے میں ہمارے حوالے کیا۔ ان خیالات کا اظہارصوبائی وزیر برائے اطلاعات فیاض الحسن چوہان نے لندن میں شہباز شریف کی نیوز کانفرنس کے رد عمل میں کیا۔ انہوں نے کہا کہ شہباز شریف نے ماڈل ٹاو?ن کی صورت میں پنجاب میں قتل و غارت کا بازار گرم کیے رکھا اور پنجاب کی پولیس، واسا، پٹوار سمیت تمام اداروں کا سوا ستیاناس پھیرے رکھا۔ فیاض الحسن چوہان نے مزید کہا کہ آج شہباز شریف کس منہ سے اپنی بے گناہی کی بات کر رہے ہیں۔ شہباز شریف نے اس برطانوی صحافی کے خلاف دائر کیے گئے ہتک عزت کیس کو بھی فالو نہیں کیا جس نے انہیں کرپٹ کہا تھا۔ فیاض الحسن چوہان نے کہا کہ شہباز شریف صاحب کے پیٹ میں مروڑ کرپشن کی گاجریں کھانے سے اٹھ رہا ہے اور نیب کا ڈاکٹر ہی اب ان مروڑوں کا علاج کرے گا۔ انہوں نے شہباز شریف کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ وہ عوام کو بے وقوف بنانا چھوڑ دیں اور واپس آ کر عدالتوں کا سامنا کریں۔ جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق سینئر صحافی کامران خان کا کہنا ہے کہ جس کسی کو پاکستان کی تیزی سے بہتر ہوتے ہو ئے معاشی حالات کے بارے میں ذرا بھی شک ہے وہ یہ رپورٹ پڑھے۔انکا کہنا ہے کہ رواں سال پاکستان میں غیر ملکی رقم کی بے مثال آمد دیکھی گئی ہے۔سینئر صحافی کامران خان نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر پیغام دیتے ہوئے ایک رپورٹ کا حوالہ دیا ہے اور کہا ہے جس کسی کو پاکستان کی تیزی سے بہتر ہوتے ہو ئے معاشی حالات کے بارے میں ذرا بھی شک ہے وہ یہ خبر پڑھے ۔انکا مزید کہنا تھا کہ اگر آپ سچے پاکستانی ہیں تو یہ رپورٹ پڑھ پر آپکی طبیعت خوش ہو جائیگی اور پاکستان پر اعتماد میں اضافہ ہو گا۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ عالمی سرمایہ کاروں نے صرف نومبر میں 642 ملین ڈالر کے 1 سالہ بانڈز خریدے ہیں۔توقع ہے کہ مالی سال کے آخر تک یہ ریکارڈ 3 ارب ڈالر تک پہنچ جائے گا کیونکہ سرمایہ کار اعلی سود کی شرحوں اور معاشی اصلاحات کے وعدوں کے لالچ میں آ گئے ہیں۔وزیر اعظم عمران خان کے مالیاتی مشیر عبد الحفیظ شیخ کے مطابق ، 2019 کی پہلی ششماہی میں براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری میں 200 فیصد کا اضافہ ہواہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں