بیرسٹر سلطان محمود چوہدری کی قیادت میں فرانس میں سینکڑوں کشمیریوں کا احتجاجی مظاہرہ

پیرس( ہاٹ لائن)فرانس کی پارلیمنٹ کے سامنے آزاد کشمیر کے سابق وزیر اعظم وپی ٹی آئی کشمیر کے صدر بیرسٹر سلطان محمود چوہدری کی قیادت میں سینکڑوں کشمیر کا زبردست احتجاجی مظاہرہ۔ بیرسٹر سلطان محمود چوہدری جو کہ گذشتہ رات ہی پیرس پہنچنے تھے نے کشمیریوں کے احتجاجی مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ انقلاب فرانس ہمارے لئے بھی مشعل راہ ہے اور جسکی تاریخ ہمیں آج بھی یاد ہے کہ کس طرح انھوں نے ایک مخصوص طبقے کے خلاف علم بغاوت بلند کیا اور کامیابی حاصل کی۔کشمیر کے لوگ بھی اپنے حق کے لئے جدوجہد کررہے ہیں لہٰذا فرانس یورپی یونین کے ساتھ ملکر مقبوضہ کشمیرمیں جاری انسانی حقوق کی پامالی رکوانے اور مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے اپنا کردار ادا کرے۔بیرسٹر سلطان محمود چوہدری نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں اب بربریت کی انتہاءہو چکی ہے اور اب وقت آگیا ہے کہ انٹرنیشنل کمیونٹی مقبوضہ کشمیر میں مظالم بند کرانے اور مسئلہ کشمیر حل کرانے میں مددکرے۔اس موقع پر مظہرین میں زبردست جوش و خروش پایا جاتا تھا۔ مظاہرے میں خواتین کی بڑی تعداد بھی شریک تھی۔ اس مظاہرے میں زاہد ہاشمی، آصف جرال اور دیگر نے بھی خطاب کرتے ہوئے بیرسٹر سلطان محمود چوہدری کی مسئلہ کشمیر پر کوششوں کو سراہا اور کہا کہ ہم انکی خدمات کو قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں اور انکی کال پر تمام جماعتوں اور مکتب فکر کے لوگوں نے اس مظاہرے میں شرکت کی اور مقبوضہ کشمیر کے عوام سے اظہار یکجہتی کیا۔ اس موقع پر مظاہرین کافی دیر تک فرانس کی پارلیمنٹ کے سامنے احتجاج کرتے رہے اور نعرے لگاتے رہے لاٹھی کی سرکار نہیں چلے گی، مودی کے یاروں کو ایک دھکا اور دو، کشمیر کشمیریوں کا ہے۔ اس موقع پر جلسے کے منتظم زاہد ہاشمی نے مظاہرے کے شرکاءکا شکریہ ادا کیا۔کہ آپ لوگ گذشتہ روز بھی برسلز ملین مارچ میں شریک ہوئے اور آج بھی یہاں اتنی بڑی تعداد میں شریک ہوئے۔اس مظاہرے سے اب یہ لگتا ہے کہ بھارت اب کشمیریوں پر زیادہ دیر قابض نہیں رہ سکتا۔بیرسٹر سلطان محمود چوہدری نے اپنے ایک ماہ کے دورے کے دوران امریکی وزارت خارجہ، ہالینڈ کی وزارت خارجہ، برسلز پارلیمنٹ، یورپی یونین اور ممبران یورپی پارلیمنٹ میں ملاقاتیں کرکے مقبوضہ کشمیر میں جاری مظالم پر بریفنگ دی۔اس موقع پر برسلز پارلیمنٹ میں آل پارٹیز کشمیر کمیٹی بنانے پر بھی اتفاق کیا گیا۔ اسی طرح انھوں نے نیویارک میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس میں بھارتی وزیر خارجہ کے خطاب کے موقع پر اقوام متحدہ کے کے دفتر کے سامنے مظاہرے کی قیادت بھی کی۔