مولانا فضل الرحمان حتمی فیصلہ لینے کے موڈ میں! (ن)لیگ اور دیگر اپوزیشن جماعتیں کیا سوچ رہی ہیں؟ پی ڈی ایم کے حوالے سے بڑی خبر

اسلام آباد (ہاٹ لائن نیوز ) حکومت کے خلاف احتجاجی تحریک اور لانگ مارچ کے معاملے پر حکومت مخالف اپوزیشن جماعتوں کا اتحاد پاکستان ڈیموکریٹک الائنس (پی ڈی ایم) ایک مرتبہ پھر سے تذبذب کا شکار ہو گئی ہے۔

تفصیلات کے مطابق میڈیا رپورٹ میں بتایا گیا کہ حکومت مخالف اپوزیشن کا اتحاد یہ تاثر دے رہا ہے کہ سڑکوں پر احتجاج شروع کرنے کے بارے میں کسی حتمی فیصلے پر پہنچنے والا ہے لیکن ہر بار اس کے اجزاء کے درمیان اتفاق رائے کی کمی کی وجہ سے یہ کانپ کر رہ جاتا ہے۔ پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) وفاقی دارالحکومت تک لانگ مارچ لے جاتے ہوئے اپنی احتجاجی تحریک دوبارہ شروع کرنے پر عدم فیصلہ اور تذبذب کا شکار ہے۔

میڈیا رپورٹ میں بتایا گیا کہ پی ڈی ایم کے سربراہ مولانا فضل الرحمان اس بار ای فیصلہ کن حملہ چاہتے ہیں لیکن ان کے دیگر ساتھی ان کے اس خیال سے قطعی متاثر نہیں ہیں جس نے مولانا فضل الرحمان کو مایوس کر دیا ہے۔مسلم لیگ ن بھی اُمید باندھے بیٹھی ہے کہ شاید ملک میں ابھرتی ہوئی صورتحال پی ڈی ایم کے لیے فائدہ مند ہو سکتی ہے۔

یہی وجہ ہے کہ مولانا فضل الرحمان نے پی ڈی ایم کی سربراہی چھوڑنے پر بھی غور شروع کر دیا ہے۔ مولانا فضل الرحمان اس بات پر خاصے عرصے سے رنجیدہ ہیں کہ پہلے بھی جب اتحاد میں 11 جماعتیں شامل تھیں اور اب صرف 9 جماعتیں ہیں ۔


Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (0) in /home/hotlinenews/public_html/wp-includes/functions.php on line 5107