کارکن لڑنے کی تیاری پکڑیں،کپتان کا کھلم کھلا اعلان

اسلام آباد (ہاٹ لائن) چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے سپریم کورٹ سے کارکنوں کی گرفتاریوں کیخلاف ازخود نوٹس لینے کا مطالبہ کردیا۔ کہتے ہیں جمہوریت کے لباس میں بھیڑیا چھپا ہوا ہے۔ کارکنوں کو لڑنے کیلئے تیاری کا حکم بھی دے دیا۔
بنی گالامیں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئےعمران خان کا کہنا ہے کہ بتایا جائے حکومت نے کل کس قانون کے تحت کریک ڈاؤن کیا، یہ جمہوریت کے لباس میں بھیڑیا چھپا ہوا ہے۔ میں سپریم کورٹ سے ازخود نوٹس لینےکا مطالبہ کرتا ہوں۔ یہ گرفتاریاں نہیں بلکہ لوگوں کے جمہوری حقوق پرڈاکا مارا جا رہا ہے۔
کپتان نے آج پھرطنز کے نشتر برساتے ہوئے کہا کہ ڈکٹیٹرشپ کی پیداوارکو نہ تو جمہوریت کی سمجھ ہے نہ ہی وہ سمجھنا چاہتا ہے۔ ان کا مقصد صرف یہ ہے کہ پیسہ بناؤاور ملک سے باہر لے جاؤ۔ اگر کرپشن کی بات کرو تو مظلوم جمہوریت خطرے میں پڑجاتی ہے۔ کس فوجی ڈکٹیٹرنے اتنا ظلم کیا جو یہ کررہے ہیں۔
پاکستان کی عدلیہ کو پھر کہتا ہوں کہ یہ ٹرائل آپ کا ہے۔ جمہوریت کو عدلیہ تحفظ دیتی ہے مگراللہ کا شکر ہے کہ جھوٹی جمہوریت سب کے سامنے ننگی ہو گئی ہے۔ اگر یہ جمہوریت ہے تو پرویز مشرف کی ڈکٹیٹرشپ اس سے بہتر تھی۔ یہ دونوں منافق پیسے کے پجاری ہیں۔ ہر روزاٹھ کرپیسے کی پوجا کرتے ہیں۔ انہیں ڈر ہے کہ انصاف ہوا تو کہیں لوٹا ہوا پیسہ ہاتھ سے نہ نکل جائے۔
عمران خان کا کہنا تھا کہ ہم نے رائیونڈ جلسہ شریف برادران گھر سے 5 کلو میٹر دور کرنا تھا مگر انہوں نے کہا کہ ہمارے گھروں میں داخل ہو رہے ہیں، یہ ہماری روایت نہیں۔ یہ دونوں بھائی منافق ہیں۔ کہتے کچھ اور کرتے کچھ ہیں۔ کپتان نے اس موقع پرسابق صدرآصف زرداری کا ذکر بڑے اچھے الفاظ میں کرتے ہوئے کہا کہ آصف زرداری منافق نہیں تھا اس نے ایسی حرکتیں نہیں کیں مگریہ دونوں تیس سال سے قوم کوبیوقوف بنا رہے ہیں۔ ان کا مقصد اقتدارمیں رہ کرچوری کا پیسہ بچانا ہے ۔ نیب اور ایف بی آئی جیسے اداروں میں بھی چوروں کو بٹھا دیا ہے تا کہ کوئی ان کو پکڑنہ سکے۔
کپتان نے کہا کہ کارکن تیاری کریں، کریک ڈاؤن ہوا تو ہم سب مل کرلڑیں گے۔ حکومت نے یہاں پولیس جمع کی ہوئی ہے لیکن حملہ کیا گیا تو ہم لڑنے کیلئے تیار ہیں۔ آج پرویز خٹک کے پی کے سے کارکنوں کولیکربنی گالا آرہے ہیں۔ کارکن رکاوٹیں توڑکرآئیں گے کیونکہ یہ ان کا حق ہے۔ حملہ کیا گیا تو ہم تیارہیں۔ خیبرپختونخوا میں گورنرراج لگایا گیا تو حکومت اپنا خاتمہ اور قریب لے آئے گی۔
چیئرمین پی ٹی آئی نے ایک بار حکومت کو پیغام دیا کہ ہمیں جیلوں میں ڈالو تو وہاں سے بھی نکل کر پھر تحریک چلائیں گے۔ ہم پھر سڑکوں پر آئیں گے کیونکہ جو ہار نہیں مانتے انہیں کوئی نہیں ہرا سکتا۔