سیاسی انار کی اور تماشاگیری کی وجہ سے معیشت کو نقصان پہنچ رہا ہے لاہور چیمبر

لاہور(ہاٹ لائن) لاہور چیمبر کے صدر عبدالباسط، سینئر نائب صدر امجد علی جاوا اور نائب صدر محمد ناصر حمید خان نے کہا ہے کہ سیاسی انارکی اور سڑکوں پر تماشا گیری کی وجہ سے روزانہ صرف سٹاک مارکیٹ کو ہونے والا اربوں روپے کا نقصان اس بات کا ثبوت ہے کہ مجموعی طور پر قومی معیشت اور کاروباری شعبے کو کتنا بھاری نقصان پہنچ رہا ہے، اگر یہی صورتحال رہی معاشی ترقی کا خواب پورا ہونا تقریباً ناممکن ہوجائے گا۔ ایک بیان میں لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے عہدیداروں نے موجودہ سیاسی صورتحال پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس کا براہِ راست شکار قومی معیشت بن رہی ہے کیونکہ کاروباری سرگرمیاں تباہ ہورہی ہیں، غیرملکی سرمایہ کار متنفر ہورہے ہیں جبکہ پاکستان کے متعلق غیرامن ملک کا تاثر ابھر رہا ہے۔ لاہور چیمبر کے عہدیداروں نے کہا کہ اس وقت جب عالمی سطح پر معاشی لیڈرز بننے کی دوڑ لگی ہے اور خطے میں بھی ملک کو تجارت و معیشت کے حوالے سے سخت مقابلے کا سامنا ہے، سیاستدانوں کو ذمہ داری کا مظاہرہ کرنا اور قیام امن کے لیے کردار ادا کرنا چاہے، ملک تب تک معاشی قوت بننے کے ہدف کی جانب آگے نہیں بڑھ سکتا جب تک کہ ملک میں امن نہ ہو۔ انہوں نے کہا کہ دنیا کے کسی بھی ملک میں جب کبھی بھی امن و امان کے حالات خراب ہوتے ہیں اس کا سب سے پہلا نشانہ کاروبار، سرمایہ کاری اور پھر معیشت بنتی ہے، ایک ترقی پذیر ملک ہونے کی حیثیت سے پاکستان سیاسی شعبہ کے غیرذمہ دارانہ رویے کی وجہ سے اتنے بھاری نقصان کا متحمل نہیں ہوسکتا۔ لاہور چیمبر کے عہدیداروں نے کہا کہ چین پاکستان اکنامک کاریڈور نے پاکستان کی اہمیت میں بے پناہ اضافہ کیا ہے اور نہ صرف خطے بلکہ دنیا کے دیگر ممالک بھی اس کا حصہ بننے کی خواہش کا اظہار کررہے ہیں لہذا سیاسی انتشار پھیلاکر ترقی و خوشحالی حاصل کرنے کے اتنے بڑے موقع کو ہرگز ضائع نہ کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ سڑکوں کو میدان جنگ بنانے کے بجائے ضروری ہے کہ پارلیمنٹ کے ذریعے مسائل حل کیے جائیں اور تاجروں کو دہنی سکون کے ساتھ کاروبار کرنے اور معیشت کو پھلنے پھولنے دیا جائے۔