سپریم کورٹ نے آکسیجن سلنڈر کی قیمت سے متعلق بڑا حکم جاری کردیا

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے کرونا از خود نوٹس کیس میں آکسیجن سیلنڈرز کی قیمت مقرر کرنے کا حکم دیتے ہوئے وزارت صنعت و پیداوار کو دو دن کا وقت دے دیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں کرونا ازخود نوٹس کی سماعت ہوئی، چیف جسٹس گلزار احمد کی سربراہی میں پانچ رکنی بینچ نے سماعت کی، سماعت کے دوران ڈریپ کے نمائندے اور متعلقہ حکام عدالت میں پیش ہوئے۔

دوران سماعت ڈریپ کا موقف سننے کے بعد سپریم کورٹ نے آکسیجن سلنڈرز کی قیمت مقرر کرنے کا حکم دیا اور کہا کہ وزارت صنعت و پیداوار دو دن میں آکسیجن سلنڈر کی قیمت کا تعین کرےاور قیمت کے تعین کا طریقہ کار بھی وضع کیا جائے۔

عدالت عظمیٰ نے آکسیجن سلنڈر کی قیمت مقرر کرنے کا حکم کے پی حکومت کی درخواست پرجاری کیا، دوران سماعت ایڈیشنل اٹارنی جنرل کے پی نے عدالت عظمٰی کو آگاہ کیا کہ قیمت مقرر نہ ہونے پرسپلائرز من مانے ریٹ وصول کر رہے ہیں۔

سربراہ ڈریپ نے سپریم کورٹ کو بتایا کہ کہ آکسیجن وزارت صنعت کے ماتحت ہے ہمارا اس سے تعلق نہیں ہے ۔

جسٹس مظہر عالم نے کہا کہ ایکٹمرا کے حوالے سے کافی منفی رپورٹس ہیں،چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان اسٹیل سے آکسیجن کی بڑی مقدار مل سکتی ہے،پاکستان اسٹیل کے آکسیجن پلانٹ کوفعال کیاجاسکتاہے۔ ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے کہا کہ پاکستان اسٹیل کا آکسیجن پلانٹ 40 سال پراناہے،آکسیجن پلانٹ فعال کرنے پرایک ارب لاگت آئے گی۔