داعش دہلیز تک آ گئی، حکومتی ناکامیوں کی سزا ملک بھگت رہا ہے ،ڈاکٹر طاہر القادری

لاہور(ہاٹ لائن )پاکستان عوامی تحریک کے قائد ڈاکٹر طاہرالقادری نے کہا ہے کہ پشاور اور درگاہ شاہ نورانی پر دہشت گرد حملوں کی ذمہ داری داعش کی طرف سے قبول کرنا خطرے کا الارم ہے،داعش دہلیزتک آ گئی حکمرانوں کی مصلحتوں کی سزا قیمتی جانی و مالی نقصان کی صورت میں ملک اور قوم بھگت رہے ہیں،کرپشن اور انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں میں ملوث حکمران دہشت گردی کے نئے چیلنجز سے اراداتاً نظریں چرارہے ہیں،کرپشن اور دہشت گردی کا گٹھ جوڑ قائم ہے اور وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ زیادہ مضبوط ہورہا ہے، ایکشن پلان پر عملدرآمد کی راہ میں رکاوٹ کون ہے ،ذمہ داروں کے تعین کیلئے ایسا کمیشن بننا چاہیے جس میں اکثریت قومی سلامتی کے ادارے اور ایجنسیوں کے ارکان کی ہو،دہشت گردوں کے خلاف پہاڑوں میں جیتی جانیوالی جنگ کو سیاسی میدانوں میں نقصان پہنچایا جارہا ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز ٹیلی فون پر سنٹرل کور کمیٹی کے ممبران سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ ڈاکٹر طاہر القادری نے کہا کہ گزشتہ 2 سالوں میں ضرب عضب کے سوا دہشت گردی کے خاتمے کیلئے کوئی ٹھوس قدم نہیں اٹھایا گیا۔ دہشت گردی کے انفیکشن کے خاتمے کیلئے تنہا بندودق کا استعمال کافی نہیں اس کیلئے انتہا پسندانہ رجحانات ،رویوں، گورننس کو جنم دینے والے افکار کو تبدیل کرنا ناگزیر ہے۔انہوں نے کہا کہ قومی ایکشن پلان کے 20 نکات پر عمل ہو جاتا تو صورت حال اتنی گھمبیر نہ ہوتی۔