40ہزار پی ٹی سی ایل پنشنرز نے عمران خان سے امیدیں بباندھ لیں

بھاول نگر(نامہ نگار) پی ٹی سی ایل پنشنرز کے صبر کا پیمانہ لبریز ، پچھلے ساڑھے چھ سال سے حکومتوں اور عدلیہ کی طرف امید بھری نظروں سے دیکھنے والے 40,000 ہزار پنشنرز نے عمران خان سے امیدیں باندھ لیں ، 12 جون 2015ءسے سپریم کورٹ کا فیصلہ آ جانے کے باوجود ریویو پٹیشن کے نام پر انہیں انتظار کی سولی پر لٹکانے والوں کا یوم محشر قریب آ گیا، تفصیلات کے مطابق 2010ءسے پی ٹی سی ایل کا پرائیویٹ آجر اتصلات نے پنشنرز کے سالانہ اضافہ میں آدھے سے زیادہ کٹ لگانا شروع کر رکھا ہے جس سے غریب اور مجبور پنشنرز ایک مسلسل عذاب کا شکار ہیں پاکستان کی تمام ہائی کورٹس اور سپریم کورٹس سے پنشنرز کے حق میں فیصلہ آ جانے کے باوجود بقایا جات اور اضافہ سے محروم ہیں اور جمہوری حکمران جمہوریت بچانے کے چکر میں 40,000 ہزار پنشنرز جس میں 13,000 ہزار بیوائیں اور یتیم بچے بھی شامل ہیں اس طرح تین لاکھ سے زائد لوگوں کی قربانی کرکے دبئی کے حکمرانوں سے اپنے ذاتی تعلقات بنا رہے ہیںحکمرانوں اور عدلیہ سے مایوس پی ٹی سی ایل پنشنرز کے ایک وفد نے ٹیلی کام پنشنرز ایسوسی ایشن کے ڈپٹی سیکریٹری جنرل ایم ایچ اسلم کی قیادت میں پی ٹی آئی کے ایم این اے اسد عمر سے ملاقات کی اور انہیں تمام صورت حال سے آگاہ کیا کہ کس طرح حکمران ٹولہ اپنے دبئی میںبزنس ٹاورز ، اپارٹمنٹساور غیرقانونی سرمائے کو بچانے کے لئے پنشنرز اور انصاف کے درمیان دیواربنے ہوئے ہیں، پی ٹی سی ایل انتظامیہ اور پی ٹی ای ٹی بورڈ 12 جون 2015ءکو سپریم کورٹ آف پاکستان کا واضح فیصلہ آجانے کے باوجود عمل درآمد سے انکاری ہو کر توہین عدالت کا مرتکب ہو رہا ہے جس پر یہ فیصلہ کیا گیا ہے کہ 27 اکتوبر کو راولپنڈی ، اسلام آباد اور گرد و نواح کے تمام پی ٹی سی ایل پنشنرز اسد عمر کی قیادت میں زوردار احتجاج کریں گے اور ریلی نکالیں گے اگر حکومت کے کان پر جون نہیں رینگی تو پھر 2نومبر کو پورے پاکستان کے چالیس ہزار پنشنرز اپنے بیوی بچوں اور اہل خانہ کے ہمراہ تحریک انصاف کے احتجاجی دھرنے میں شریک ہوں گے اور اس وقت تک اسلام آباد میں رہیں گے جب تک کہ سپریم کورٹ کے فیصلے پر من و عن عمل نہیں ہو جاتا۔