نیوزی لینڈ نے کمزوری پکڑ لی ‘ ہملٹن کی گرین ٹاپ وکٹ پاکستان کی منتظر

ہملٹن (ہاٹ لائن ) تیس سال کے طویل اور صبر آزما انتظار کے بعدنیوزی لینڈ پاکستان کے خلاف پہلی ٹیسٹ سیریز میں کامیابی کا عزم لئے جمعے کو ہیملٹن کے میدان میں اترے گا۔ کرائسٹ چرچ کی طرح ، ہیملٹن کے سڈن پارک کی وکٹ پر بھی گھاس ہے۔ میزبان ٹیم نے پاکستانی ٹیم کی کمزور دیکھ لی ہے۔ باﺅنسی پچ فاسٹ بولنگ کے لئے سازگار بتائی جاتی ہے۔ پاکستان سیریز میں ایک صفر کے خسارے میں جانے کے باوجود اپنے ریگولر کپتان مصباح الحق کی خدمات سے محروم ہے۔ ون ڈے کپتان اظہر علی پہلی بار ٹیسٹ میچ میں قیادت کریں گے۔ نیوزی لینڈ کے مڈل آرڈر بیٹسمین راس ٹیلر پاکستان کے خلاف ٹیسٹ کے لئے فٹ قرار دے دیئے گئے ہیں۔ آنکھ کے مسائل سے دوچار روس ٹیلر کو دوسرے ٹیسٹ میچ کیلئے کلیئر کردیا گیا ہے لیکن بورڈ نے احتیاطاً ڈین براو?ن لی کو اسکواڈ میں طلب کیا ہے۔ ٹیم کے فزیو تھراپسٹ ٹامی سمسیک نے بتایا کہ راس ٹیلر کو دونوں اسپیشلسٹ نے کلیئر کردیا ہے اور 77 ٹیسٹ میچ کھیلنے والے مایہ ناز بیٹسمین ٹیسٹ میچ میں اچھا کھیل پیش کرنے کیلئے پراعتماد ہیں۔ پاکستان کے خلاف ٹیسٹ میچ کے بعد ان کی آنکھ کی سرجری ہو گی جس کے سبب وہ چھ ہفتوں کیلئے کرکٹ کے میدانوں سے دور رہیں گے۔ توقع ہے کہ پاکستانی ٹیم میں مصباح الحق کی جگہ محمد رضوان ٹیسٹ کیریئر کا آغاز کریں گے۔ لیگ اسپنر یاسر شاہ کی جگہ وہاب ریاض کی شمولیت کا امکان ہے۔ عالمی ٹیسٹ درجہ بندی میں ساتویں نمبر پر موجود نیوزی لینڈ کی ٹیم نے کرائسٹ چرچ میں کھیلے گئےپہلے ٹیسٹ میچ میں پاکستان کو8 وکٹ سے شکست دی تھی۔ دوسرا ٹیسٹ میچ ڈرا کرنے کی صورت میں بھی کیویز سیریز اپنے نام کر لیں گے۔ کوچ مکی آرتھر نے بھی رضوان کو کھلانے کا اشارہ دیا ہے۔ مکی آرتھر نے کہا ہے کہ مصباح الحق کا دوسرا ٹیسٹ نہ کھیلنا بڑا نقصان ہے دوسرے ٹیسٹ میں محمد رضوان ، مصباح کی جگہ لیں گے۔ بدھ کے روز میڈیا سے گفتگو میں مکی آرتھر نے کہا ہے کہ بیٹسمین کو باﺅنسر کھیلنے کی عادت ڈالنا ہو گی۔ وہاب ریاض کو پہلے ٹیسٹ میں پچ کی کنڈیشن دیکھ کر نہیں کھلایا گیا محمد عامر بہت محنت کر رہے ہیں اور ان کا رویہ بہترین ہے۔ نیوزی لینڈ کے خلاف دوسرے ٹیسٹ میں محمد رضوان یا شرجیل خان مصباح کی جگہ لیں گے انہوں نے مزید کہا کہ شرجیل خان بہت ٹیلنٹڈہیں صرف ان کے دفاعی کھیل کا بہتر بنانا ہے دوسرا ٹیسٹ مصباح کا نہ کھیلنا ایک بڑا نقصان ہے۔ یاد رہے کہ پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان اب تک 22 سیریز کھیلی گئی ہیں اور اب تک نیوزی لینڈ صرف دو سیریز جیت سکا ہے جس میں سے آخری سیریز 1985 میں جیتی تھی۔ پانچ سال قبل دونوں ٹیموں کے درمیان ہملٹن میں ہونے والے مقابلے کی دوسری اننگز میں نیوزی لینڈ کی بیٹنگ لائن 50 رنز کے اضافے سے آٹھ وکٹیں گنوا کر یکدم ڈھیر ہو گئی تھی اور مقابلے میں دس وکٹ سے شکست سے دوچار ہوئی۔ اس اننگز میں وہاب ریاض نے تین وکٹیں لے کر فتح میں اہم کردار ادا کیا تھا اور کرائسٹ چرچ ٹیسٹ کیلئے نظر انداز کیے جانے کے بعد انہیں ہملٹن میں کھلائے جانے کا امکان ہے۔ پہلے ٹیسٹ میں پاکستانی بیٹنگ بری طرح ناکام رہی تھی۔کرائسٹ چرچ ٹیسٹ کی دونوں اننگز میں پاکستانی ٹیم صرف 304 رنز بنانے میں کامیاب ہو سکی تھی اور دوسرے ٹیسٹ میچ کیلئے مصباح الحق سے محروم بیٹنگ لائن کے کاندھوں پر مزید ذمے داری آ پڑی ہے۔ گزشتہ سات سیریز سے ناقابل شکست ٹیم کی قیادت کرنے والے قومی ٹیم کے کپتان مصباح الحق اپنے سسر کے انتقال کی وجہ سے وطن واپس لوٹ گئے ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ سلو اوور ریٹ کے سبب ان پر ایک میچ کی پابندی بھی عائد کردی گئی ہے جس کے سبب اب وہ آسٹریلیا میں ہی ٹیم کی قیادت کر سکیں گے۔ مصباح کی جگہ قیادت کی ذمے داری سنبھالنے والے اظہر علی نے کہا کہ بیٹنگ یونٹ کی حیثیت سے ہمیں بہتر کھیل پیش کرنے کی ضرورت ہے اور اگلے میچ میں ہمیں بہتر کھیل پیش کرنا ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ یقیناً ہمیں مصباح کی کمی محسوس ہو گی لیکن ہمیں اس چیز پر قابو پانا ہو گا اور ان کی جگہ آنے والے کھلاڑی کو اس موقع کو غنیمت جانتے ہوئے کارکردگی دکھانا ہو گی۔ انہوں نے کہا کہ ہم وکٹ اور کنڈیشنز دیکھ بہترین گیارہ کھلاڑیوں کا انتخاب کریں گے۔ قومی ٹیم کے کوچ نے کہا کہ ہم محمد رضوان اور شرجیل خان کی صورت میں ہمارے پاس دو آپشن موجود ہیں لیکن وہ محمد رضوان کو کھلانے کے حامی نظر آئے کیونکہ شرجیل کو کھلانے کی صورت میں پوری بیٹنگ لائن کو تبدیل کرنا پڑ سکتا ہے۔ نیوزی لینڈ کی ٹیم میں اسپنر مچل سینٹنر کی واپسی ہوئی ہے اور انہیں دوسرے ٹیسٹ میچ میں کھلائے جانے کا امکان ہے۔ ہیملٹن میںپاکستان نے چار ٹیسٹ کھیلے ہیں۔دو جیتے، ایک ہارے اور ایک میچ ڈرا رہا۔ نیوزی لینڈ نے یہاں21 میں سے9 میچ جیتے، چھ ہارے اور چھ میچ ڈرا رہے۔