یورپ میں فضائی آلودگی سےاموات میں اضافہ، شہری سانس کی بیماری میں مبتلا

یورپ کے مختلف شہروں میں ہر 10 میں سے نو شہری ایسی ہوا میں سانس لینے پر مجبور ہیں جو صحت کے لیے نقصان دہ ہے اور یہی وجہ ہے کہ شہریوں کی قبل از وقت موت میں مسلسل اضافہ ہورہا ہے۔ فرانسیسی خبر رساں ادارے کے مطابق، یورپی ماحولیاتی ادارے (ای ای اے) کا بتانا ہے کہ ہوا کے معیار میں آہستہ آہستہ بہتری آرہی ہے تاہم اب بھی یہ شہریوں کی صحت پر منفی اثرات مرتب ہو رہے ہیں۔ ای ای اے کی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ یورپ کے شہری علاقوں میں فضائی آلودگی لوگوں کی قبل از وقت اموات کی اہم وجہ ہے، اور 400 شہروں سے اکھٹا کی گئی معلومات سے یہ بات سامنے آئی کہ 2013 کے دوران 4 لاکھ 67 ہزار کے قریب افراد فضائی آلودگی کی وجہ سے جلد انتقال کرگئے۔ یورپی ماحولیاتی ادارے کے ڈائریکٹر ہینس بروئننکس نے سالانہ رپورٹ اور جاری کردہ بیان میں بتایا کہ اعدادوشمار سے اندازہ ہوتا ہے کہ سال 2014 میں 85 فیصد شہری آبادی کو فضائی آلودگی کا سامنا رہا جس کی اہم وجہ توانائی کے حصول کے لیے حیاتیاتی ایندھن کا جلایا جانا ہے۔ ان کے مطابق، فضا میں موجود آلودگی کی شرح ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) کی جانب سے طے کردہ محفوظ حد سے زیادہ تھی، یہ اضافہ شہریوں کو سانس کی بیماری میں مبتلا کرنے کی اہم وجہ بنا۔
رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ فضا میں موجود پارٹیکیولیٹ میٹر (پی ایم) کی باریک مقدار سانس کے ذریعے پھیپھڑوں میں داخل ہوجاتی ہے، یہ خوردبینی پی ایم خون کی گردش میں شامل ہوکر بھی صحت کو نقصان پہنچانے کا سبب بن سکتا ہے۔ رپورٹ کے مطابق، گذشتہ چند دہائیوں میں ہوا کو آلودہ کرنے والے بنیادی عناصر پر پابندی کے بعد یورپ میں ہوا کے معیار میں بڑی حد تک بہتری آئی ہے، کچھ سیکٹرز میں پابندیوں کے بعد ہوا زیادہ صاف ہوچکی ہے مگر دوسری جانب کچھ سیکٹرز میں نائٹروجن آکسائڈز جیسے آلودگی پھیلانے والے کیمکلز کے اخراج میں اضافے کے بعد سانس کی بیماریوں اور دل کی بیماریوں کے کیسز کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے۔ کوئلے اور دیگر حیاتیاتی ایندھن کو جلانے کی وجہ سے فضا میں ایک مخصوص ہائیڈروکاربن کی مقدار میں اضافہ بھی نوٹ کیا گیا۔ رپورٹ میں بتایا گیا کہ شہروں میں کئی ایسے مقامات ہیں جو ہوا کے معیار خراب کرنے کا سبب ہیں، ان مقامات کو ’بلیک اسپاٹس‘ قرار دیتے ہوئے لوکل اور علاقائی حکومت کو اس پر توجہ دینے کی تجاویز بھی دی گئی ہیں۔

کیٹاگری میں : صحت