کبھی کسی خاتون سے شادی تو کیا ہاتھ بھی نہیں لگائیں گے، انٹرنیٹ پر ایک نئی طرز کی مہم

لندن (ہاٹ لائن) اب تک تو زمانے کا دستور یہی تھا کہ مرد صنف نازک کی توجہ حاصل کرنے کے لئے سو، سو پاپڑ بیلتے نظر آتے تھے مگر اب وقت بدل گیا ہے اور دنیا کے ہزاروں لاکھوںمردوں میں ایک ایسی تبدیلی دیکھنے میںآرہی ہے کہ جس کا پہلے کبھی تصور بھی نہیں کیا گیا تھا۔
اخبار دی انڈی پینڈنٹ کی رپورٹ کے مطابق انٹرنیٹ پر ایک نئی طرز کی مہم چل نکلی ہے جس میں دنیا بھر کے لاکھوں مرد دھڑادھڑ شامل ہورہے ہیں اور عمر بھر خواتین سے دور رہنے کا عہد کر رہے ہیں۔ ان لوگوں کی مہم کا نام ”مین گو دیئر اون وے(Men Go Their Own Way) “ہے، یعنی دوسرے لفظوں میں ”مرد اپنے سہارے پر۔“ اس مہم کا حصہ بننے والے مردوں کا نظریہ ہے کہ خواتین سے مکمل طور پر بے نیاز ہوکر ہی وہ اپنا اصل مقام اور عزت پاسکتے ہیں۔ ان مردوں نے نہ صرف خواتین کے ساتھ میل جول ترک کرنے کو اپنا شعار بنا لیا ہے بلکہ یہ قسم بھی کھائی ہے کہ کبھی کسی خاتون کے قریب بھی نہ جائیں گے۔
حیرت کی بات ہے کہ دنیا کے ہر ملک سے مرد اس تحریک میں شامل ہورہے ہیں اور متعدد سوشل میڈیا ویب سائٹوں پر قائم کئے گئے ان کے گروپوں کے ارکان کی تعداد ہزاروں میں ہے۔ صرف ویب سائٹ ریڈٹ پر ہی 15 ہزار سے زائد مرد اس تحریک کا حصہ ہیں اور اسی طرح ویب سائٹ Mgtow.com پر بھی ہزاروں افراد اس تحریک کے پرچم تلے جمع ہو گئے ہیں۔
اس تحریک سے تعلق رکھنے والے مرد صرف یہی عہد نہیں کررہے کہ وہ مستقبل میں کسی خاتون سے تعلق استوار نہیں کریں گے بلکہ اس بات کا پرچار بھی کررہے ہیں کہ شادی شدہ مرد بھی اپنی بیگمات سے نجات پالیں۔ یہ لوگ ناصرف صنف مخالف سے تعلقات کے حق میں نہیں بلکہ مغربی معاشرے میں عام پائے جانے والے ہم جنس تعلقات کو بھی غلط قرار دیتے ہیں۔
ان کے نظریات کا ایک بنیادی نقطہ یہ ہے کہ اگرچہ صنف مخالف کا ساتھ اور جسمانی ضرورت انسان کا فطری تقاضہ ہے، لیکن اس کے لئے خواتین جتنی منت سماجت کرواتی ہیں اور مردوں کو جس طرح خوار کرتی ہیں اس سے بہتر ہے کہ مرد صبر ہی کرلیں۔ مردوں کو چاہئیے کہ وہ ایسی خواتین کو تنہا چھوڑ دیں تاکہ انہیں احساس ہو کہ ان کے بغیر بھی دنیا اچھی بھلی چل سکتی ہے۔ (ن ی)