ٹرمپ کے خلاف مظاہرے ، ہنگاموں میں تبدیل

پورٹ لینڈ (ہاٹ لائن) امریکہ کے مختلف شہروں میں دوسرے روز بھی صدارتی انتخاب میں ڈونلڈ ٹرمپ کے منتخب ہونے کے خلاف احتجاج جاری ہے جبکہ ریاست اوریگون کے شہر پورٹ لینڈ میں مظاہروں نے پرتشدد صورتحال اختیار کر لی ہے۔ پورٹ لینڈ میں سڑکوں پر ہزاروں کی تعداد میں مظاہرین نے دکانوں اور گاڑیوں کی شیشے توڑے ہیں۔ مظاہرین نے ایک بڑے کوڑا دان کو نذر آتش کر دیا جبکہ پولیس پر کریکرز پھینکے۔ پولیس نے ٹرمپ مخالف احتجاج کو ہنگامے قرار دیا ہے۔
خیال رہے کہ مختلف شہروں میں ہونے والے مظاہروں میں گذشتہ روز کے مقابلے میں مظاہرین کی تعداد کم رہی ہے۔
america
زیادہ تر مظاہرین نوجوان تھے اور ان کا کہنا تھا کہ ٹرمپ کی صدارت نسلی اور صنفی تقسیم پیدا کرے گی۔ اس کے ردعمل میں ڈونلڈ ٹرمپ نے ٹویٹ کی ہے کہ مظاہرے ‘بہت نامناسب’ ہیں۔ اس سے قبل انھوں نے وائٹ ہاؤس سے صدر براک اوباما سے ملاقات کی تھی اور اچھے ایک اچھا شخص بیان کیا تھا۔ ڈونلڈ ٹرمپ کی مخالفت میں جمعرات کی شام فلاڈیلفیا، بالٹیمور، سالٹ لیک سٹی اور گرینڈ ریپڈز سمیت دیگر شہروں میں مظاہرے کیے گئے۔ فلاڈیلفیا میں مظاہرین سٹی ہال کے قریب جمع ہوئے اور انھوں نے بینرز اور پلے کارڈ اٹھا رکھے تھے جن پر ‘ہمارا صدر نہیں’، ‘امریکہ کو سب کے لیے محفوظ بناؤ’ جیسے نعرے درج تھے۔