گھوٹکی ٹرین حادثہ: ٹریک تاحال کلیئر نہ ہو سکا، شہری پریشان

کراچی: گزشتہ روز گھوٹکی میں ٹرین حادثے کے بعد تاحال ٹریک کو کلیئر نہ کیا جاسکا، کراچی سے روانہ ہونے والی اور اندرون ملک سے آنے والی ٹرینیں 24 گھنٹوں سے مختلف اسٹیشنز پر موجود ہیں۔

تفصیلات کے مطابق کراچی سے روانہ ہونے والی ٹرینیں بدستور مختلف اسٹیشنز پر موجود ہیں، ریلوے ٹریک کلیئر نہ ہونے سے اسٹیشنز پر کھڑی ٹرینوں میں پانی ختم ہوچکا ہے۔

ریلوے انتظامیہ نے متاثرہ ٹرینوں کے مسافروں کو بے یار و مددگار چھوڑ دیا، مقامی افراد کی جانب سے مسافروں میں کھانے پینے کی اشیا تقسیم کی جارہی ہیں۔

راولپنڈی جانے والی سرسید ایکسپریس گزشتہ 24 گھنٹے سے پنو عاقل میں موجود ہے، خیبر میل رانی پور اور زکریا ایکسپریس گھوٹکی اسٹیشن جبکہ راولپنڈی جانے والی گرین لائن خیر پور اسٹیشن پ 24 گھنٹے سے کھڑی ہے۔

ٹریک کلیئر نہ ہونے پر فرید اور شاہ حسین ایکسپریس بھی روہڑی اسٹیشن پر موجود ہیں، علاوہ ازیں اندرون ملک سے آنے والی ٹرینیں بھی مختلف اسٹیشنز پر موجود ہیں۔

دوسری جانب ڈی ایس ریلوے طارق لطیف کا کہنا ہے کہ گھوٹکی کا ریلوے ٹریک 2 سے 3 گھنٹے تک آمد و رفت کے لیے بحال ہوجائے گا، حادثے سے 1 ہزار 80 فٹ ٹریک کو نقصان پہنچا۔

ڈی ایس ریلوے کا کہنا ہے کہ ٹریک بحالی کے لیے 24 گھنٹے بلا تعطل آپریشن کیا گیا، دور دراز کے مختلف اسٹیشنز سے ٹرینوں کو روانہ کر دیا گیا ہے، ٹرینوں کے یہاں پہنچنے تک ٹریک بحال ہوجائے گا۔