عوامی تحریک منہاج القرآن لاہور کا ہنگامی اجلاس

لاہور(ہاٹ لائن ) پاکستان عوامی تحریک لاہور اور منہاج القرآن لاہور کے ہنگامی اجلاس ماڈل ٹاﺅن سیکرٹریٹ میں منعقد ہوا ۔اجلاس میںعوامی تحریک اور پی ٹی آئی کے کارکنوں کی گرفتاری،پولیس تشدد کی شدید ترین مذمت کرتے ہوئے کہا گیا کہ حکمران ہوش کے ناخن لیں اور سیاسی کارکنوں پر اُتنا ظلم کریں جتنا وہ خود برداشت کر سکیں اجلاس میں عوامی تحریک لاہور کے صدر چوہدری افضل گجر ،منہاج القرآن لاہور کے امیر حافظ غلا م فرید ،عارف چودھری،میاں افتخار،ملک یاسین،عابد چودھری،ڈاکٹر اقبال نور،شفاقت مغل، صائمہ ایوب و دیگر رہنما شریک تھے ۔اجلاس سے گفتگو رتے ہوئے حافظ غلام فرید نے کہاکہ” جاگ پنجابی جاگ“ کا نعرہ لگانے والے ملک دشمن حکمرانوں نے آج ایک اور صوبے کے خلاف اعلان جنگ کر دیا ہے ۔ شریف برادران کا رویہ ملک دشمنی کے مترادف ہے ۔حکمران کس منہ سے آئین ،قانون اور جمہوریت کی بات کرتے ہیں ،سیاسی کارکنوں پر تشدد ،جبر اور گرفتاریوں کی شدید مذمت کرتے ہیں ۔ظالم اور قاتل حکمرانوں کا محاسبہ نہ ہوا تو یہ ملک کی ہر گلی کو ماڈل ٹاﺅن بنا دیں گے ،حکمران اوچھے ہتھکنڈوں سے ملک میں انارکی پھیلا رہے ہیں ،جو حکمران اپنا دارلحکومت نہیں سنبھال سکتے وہ ملک کو کیا سنبھالیں گے ۔چودھری افضل گجر نے اپنے خطاب میں کہاکہ عوامی تحریک کے کارکن گرفتاریوں سے ڈرنے والے نہیں ۔حکومت کے ہاتھ پاﺅں پھول چکے ہیں ،فیصلے بوکھلاہٹ اور گھبراہٹ میں کئے جا رہے ہیں ،عوام ان حکمرانوں کو اور فرسودہ نظام کو بدل کر رہیں گے ،انہوں نے کہاکہ پر امن سیاسی کارکنوں پر ظلم پنجاب کے چھوٹے نمرود کے حکم پر کیا جا رہا ہے جبکہ نمرود کے انجام کےلئے ایک مچھر ہی کافی ہے ۔حکمرانوں کے دن گنے جا چکے ہیں ۔قوم انتظار کرے ڈاکٹر طاہر القادری جلد وطن واپس آئینگے او ر پھر لٹیرے اقتدار کے ایوانوں سے با ہر ہونگے۔انہوں نے کہاکہ حکمرانوں نے ماڈل ٹاﺅن میںاقتدار کے نشے میں 14 معصوم لوگوں کی لاشیں گرائیں اور 100افراد کو گولیوں سے چھلنی کیا ۔لعنت ہے ایسی جمہوریت پر ۔لاہور سمیت پورے ملک میں سیاسی کارکنوں پر تشدد کیا جا رہا ہے کیا آئین پاکستان شہریوں کے قتل عام کی اجازت دیتا ہے ۔معصوم لوگوں کی لاشیں گرا کر یہ حکمران اقتدار نہیں بچا سکتے ۔