جواب آگیا،حکومت مان گئی،نوازشریف کمیشن کے قیام کو تسلیم کریں گے

اسلام آباد(ہاٹ لائن ) پاناما لیکس کی تحقیقات کیلئے وزیراعظم نوازشریف سپریم کورٹ کی جانب سے کمیشن کے قیام کو تسلیم کریں گے جبکہ پاکستان تحریک انصاف کا کہنا ہے کہ حکومت جائیدادوں اورگوشواروں تک محدودکررہی ہے، چاہتےہیں تمام معاملات کی تحقیق اورتفتیش ہو۔
پاناما لیکس کے معاملے پر وزیراعظم کو نااہل قراردینے اور کمیشن کی تشکیل سے متعلق درخواستوں کی سماعت وقفے کے بعد پھرسے ہو رہی ہے۔ حکومت اور پاکستان تحریک انصاف نے جوڈیشل کمیشن کی تشکیل سے متعلق جوابات جمع کرا دیے۔
وزیراعظم کے وکیل سلمان اسلم بٹ نےوقفے کے بعد عدالت کو بتایا کہ وزیر اعظم نے سپریم کورٹ کا کمیشن تسلیم کرلیا ہے۔
الزامات درست ہوئے تو وزیراعظم قانونی نتائج تسلیم کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم کو لندن کی جائیداوں پر کمیشن بنانے سے متعلق اعتراض نہیں۔ وزیراعظم کمیشن کی تجویزسےاتفاق کرتےہیں۔
حکومت کی جانب سے موقف اپنایا گیا ہے کہ الزامات میں جہانگیر ترین اور عمران خان کی بہن کا نام بھی شامل ہے۔ اس معاملے کی بھی مکمل تحقیقات کی جائے۔
دوسری جانب پی ٹی آئی کے وکیل حامد خان نے جواب جمع کرایا جس کے مطابق حکومت تحقیقات کو جائیدادوں اور گوشواروں تک محدود کر رہی ہے ، چاہتے ہیں کہ تمام معاملات کی تحقیق اورتفتیش ہو۔
جس پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ کمیشن کے پاس مینڈیٹ ہوگا کہ تمام معاملات کی تفتیش کرے۔
دوران سماعت جسٹس شیخ عظمت سعید کاکہنا تھا کہ دونوں طرف سے آٹھ ماہ سے پش اپس لگائے جا رہے ہیں۔ پتہ نہیں معاملہ کہاں تک جائے گا۔ جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ بات پش اپس سے آگے چلی گئی ہے۔
جسٹس آصف سعید کھوسہ کا کہنا تھا کہ معاملہ جلد از جلد ہر صورت حل کریں گے،اعلیٰ ترین عدلیہ نے معاملے کا نوٹس لیا ہے۔ سب لوگ اپنے مؤقف پر لچک دکھائیں۔