کیا کراماتی بچوں سے پوچھا جائے گا کم عمری میں اربوں کی جائیدادیں کیسے خریدیں؟ڈاکٹر طاہر القادری

لاہور ( ہاٹ لائن)پاکستان عوامی تحریک کے قائد ڈاکٹر محمد طاہر القادری نے کہا ہے کہ کیا کراماتی بچوں سے پوچھا جائے گا کہ کم عمری میں اربوں کی جائیدادیں کس جادو کی چھڑی سے خریدی گئیں؟وزیراعظم نے قوم سے خطاب اور پارلیمنٹ کے فلور پر جو موقف دیا وہ سپریم کورٹ میں جمع کروائے گئے بیان سے متصادم ہے،یہ کہنا کہ کوئی بچہ ان کی زیر کفالت نہیں 2013 ءمیں الیکشن کمیشن میں جمع کروائے گئے گوشواروں سے متصادم ہے ،دولت کے ماخذ اور دولت کی آمدروفت اور نقل و حرکت کے بارے میں اگر زور دے کر پوچھا گیا تو امید سے نہیں کہا جا سکتا کہ سماعت خیر و عافیت سے جاری رہ سکے گی،ہماری اطلاع کے مطابق 7 ماہ کے طوریل عرصہ میں کاغذات میں ضروری ردوبدل اور تبدیلیاں عمل میں لائی جا چکی ہیں،دیکھتے ہیں تحقیقات کرنے والوں کادائرہ اختیار کب چیلنج ہوتا ہے اور عوام اور آئین کی ”حقیقی نمائندہ پارلیمنٹ “شفاف تحقیقات کی خاطر کون سا نیا قانون پاس کرتی ہے۔گزشتہ روز انہوں نے عوامی تحریک کے سینئر رہنماﺅں سے ٹیلیفون پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ کرپشن کا یہ واحد کیس ہے جس کے ثبوت ملزمان کے بیانات اور خود چلتے پھرتے ملزمان اور ان کی جائیدادیں ہیں ۔انہوں نے کہا کہ وزیراعظم کے خلاف پٹیشن کی منطوری اور سماعت کے آغاز سے میاں نواز شریف کی بطور وزیراعظم اخلاقی حیثیت ختم ہو گئی ہے مگر شریف برادران کی جمہوریت اور اخلاقیات کا آپس میں کیا لینا دینا؟۔ انہوں نے کہا کہ کمیشن پہلے بھی کئی بنے اور آئندہ بھی بنیں گے مگر رپورٹیں منظر عام پر نہیں آتیں۔ماڈل ٹاﺅن پر بننے والے جوڈیشل کمیشن کی رپورٹ بھی ابھی آنا باقی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کن ٹی او آرز کے تحت کارروائی کو آگے بڑھاتی ہے اس کے بارے میں فی الحال کوئی رائے قائم نہیں کی جا سکتی۔کچھ سوالوں کے جواب وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ سامنے آئیں گے۔انہوں نے کہا کہ اصل سوال یہ ہے کہ دبئی کی جب سٹیل مل بیچی گئی تھی تو وہ پیسہ 1982 ءسے 2000 ءتک کہاں پڑا رہا؟ اور پھر جدہ کیسے پہنچا اور پھر 2005 ءمیں یہ پیسہ کن ذرائع سے لندن پہنچا جبکہ آف شور کمپنیاں بتارہی ہیں یہ فلیٹس 90ءکی دہائی میں خریدے گئے۔یہ کیسی خریداری ہے جس میں رہائش 90 ءسے پہلے اختیار کر لی گئی جبکہ ادائیگی پچیس سال بعد ہوئی؟۔اس عرصہ میں مذکورہ فلیٹس میں کس حیثیت اور معاہدے کے تحت رہائش اختیار کی گئی ؟یہ ایک علیحدہ سوال ہے۔ ڈاکٹر طاہر القادری نے کہا کہ ریکارڈ بالآخر حکومت نے پیش کرنا ہے دیکھتے ہیںحکمرانوں کے خلاف اصلی ریکارڈ کس طرح تحقیقاتی فائلوں کا حصہ بنتا ہے کیونکہ مارکیٹ میں اصلی اور نقلی دونوں قسم کے ریکارڈ دستیاب ہیں ۔دریں اثناءسربراہ عوامی تحریک نے ٹرین حادثہ اور قیمتی جانوں کے ضیاع پر دلی افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ عوام کے محافظ ادارے خونی ادارے بن چکے ہیں۔قومی ادارے نالائقوں کے ہاتھ میں ہیں اس لیے عوام غیر محفوظ ہیں۔انہوں نے کہا کہ وزیر ریلوے کی توجہ اپنے محکمے کے علاوہ باقی ہر مسئلے پر ہے۔