maryam-aurangzeb

تنخواہوں میں اضافے سےقومی خزانے پر 40کروڑ سے زائد کا بوجھ پڑیگا: مریم اورنگزیب

اسلام آباد (ہاٹ لائن) وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات مریم اورنگزیب نے کہا ہے کہ وزیرا عظم نے ارکان قومی اسمبلی کی تنخواہوں میں اضافے کی منظوری دیدی ہے تاہم تنخواہوں میں اضافے سے قومی خزانے پر 40کروڑ سے زائد کا بوجھ پڑیگا ۔” افراط زر کو مد نظر رکھ کر اراکین اسمبلی کی تنخواہوں میں اضافے کا فیصلہ کیا “۔ وفاقی کابینہ کے اجلاس کے بعد میڈیا بریفنگ دیتے ہوئے انکا کہنا تھا کہ کابینہ اجلاس میں عوامی نمایندوں کی تنخواہوں پرنظرثانی کی گئی ہے اور وزیر اعظم نے تنخواہوں میں اضافے کی منظوری بھی دیدی ہے ۔ ارکان اسمبلی کی بڑھائی گئی تنخواہوں میں ایڈہاک ریلیف بھی شامل ہے۔ تنخواہوں میں اضافہ یکم اکتوبر سے لاگو ہو گا ۔ وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات کا مزید کہنا تھا کہ سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں ہر سال اضافہ کیا جاتا ہے تاہم 2004ءکے مقابلے میں افراط زر میں اضافہ ہو اہے ۔ 2010ءمیں پہلی بار ایڈہاک ریلیف دیا گیا ۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان نے 6ممالک کے ساتھ 9 معاہدے کیے ہیں جن میں مالدیپ کےساتھ ڈاکٹرزاورفارماسیوٹیکل کے حوالے سے معاہدہ ہواہے جو شارٹ اور لانگ ٹرم ہے ۔اس کے علاوہ ملائیشیاکےساتھ کرپشن پرقابوپانے کے حوالے سے معاہدہ ہواجبکہ بیلاروس کےساتھ آئی ٹی کے استعمال سے کرائم روکنے کامعاہدہ ہواہے ۔قازقستان کے ساتھ بھی دفاعی معاہدہ ہواہے ۔وزیر اطلاعات نے بتایا کہ پاکستان اورجنوبی افریقاکےساتھ دفاعی معاہدہ ہواہے۔آذربائیجان کےساتھ ایمرجنسی اورقدرتی آفات سے نمٹنے کامعاہدہ ہواہے۔